Go to Top

بورڈ آف ڈائریکٹرز

ڈاکٹر شمشإد اختر

چیئرپرسن

ڈاکٹر شمشاد اخترمعروف ملکی اور بین الاقوامی اداروں میں ڈیولپمنٹ کے کاموں کا 37سالہ وسیع تجربہ حاصل ہے۔ آپ 2006سے 2009تک اسٹیٹ بینک آف پاکستان میں گورنر کے عہدے پرفائز رہیں اور اکنامک اینڈ سوشل کمیشن آف ایشیا اینڈ پیسفک (UNESCAP) کے انڈر سیکرٹری جنرل، اکنامکس اور فنانس کی سینئراسپیشل ایڈوائزر، اسسٹنٹ سیکرٹری جنرل یواین، یو این سیکرٹری جنرل کی G20 Sherpa اور ورلڈ بینک میں وائس پریزیڈنٹ، مڈل ایسٹ اینڈ نارتھ امریکہ (MENA)کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکی ہیں۔ ایشین ڈیولپمنٹ بینک کے صدر کی سینئر اسپیشل ایڈوائزر بھی رہ چکی ہیں۔ 2018میں ڈاکٹر شمشاد اخترنے وفاقی وزیربرائے فنانس، ریوینیو، اکنامک افیئرز، اسٹیسٹکس ڈویژن، پلاننگ اینڈ ڈیولپمنٹ کے ساتھ ساتھ پاکستان کی کیئر ٹیکنگ گورنمنٹ میں انڈسٹری اور کامرس کے شعبہ جات میں بھی خدمات انجام دی ہیں۔

ڈاکٹر اختر نے مختلف سرکاری اور نجی شعبہ کے اداروں کو ڈیولپمنٹ، گورننس، غربت، نجکاری اور مختلف شعبوں میں پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپس کے بارے میں مشورے بھی فراہم کئے ہیں۔ اسٹیٹ بینک آف پاکستان میں گورنر کے طور پر تعیناتی کے دوران میں آپ کو2006میں ایمرجنگ مارکیٹس گروپ کی جانب سے اور 2007میں بینکرز ٹرسٹ کی جانب سے ایشیا کی بہترین سینٹرل بینک گورنر کےلئے نامزد کیا گیا۔ آپ 2008میں ایشین وال اسٹریٹ جرنل کی ٹاپ ٹین ویمن بزنس لیڈرز کی فہرست میں شامل تھیں۔ ڈاکٹر شمشاد اختر ایک غیر منافع بخش کمپنی کارانداز کی چیئرپرسن بھی ہیں جوبنا بینک کھاتے کے افراد اور بنا معاون اداروں کو، خاص طور پر خواتین اور نوجوانوں کومعاشی ترقی اور ملازمتوں کی فراہمی کے ذریعہ مالیاتی امداد پر بھرپور توجہ دیتی ہیں۔ آپ ہارورڈ یونیورسٹی کے ڈپارٹمنٹ آف اکنامکس کی پوسٹ ڈوکٹورل فیلو اور یو ایس فل برائٹ اسکالر بھی رہی ہیں۔ آپ انتہائی قابل ڈاکٹر ہیں جنہوں نے یونیورسٹی آف پیسلے یو کے سے اکنامکس میں پی ایچ ڈی اور، یونیورسٹی آف سیسکس، یو کے سے ڈیولپمنٹ آف اکنامکس میں ڈگری کے ساتھ ماسٹر آف آرٹس اور یونیورسٹی آف اسلام آباد سے ایم ایس سی (اکنامکس) جبکہ یونیورسٹی آف پنجاب سے بیچلر آف آرٹس (اکنامکس) کی سند حاصل کی ہے۔

محمد رضی الدین منيم

ڈائریکٹر

نداء رضوان فريد

ڈائریکٹر

ندا رضوان فرید ایک ایرو اسپیس انجینئر اور انرجی ایفیشنسی کنسلٹنٹ ہیں۔ وہ ایئر بس A320, A330, A350XWB, A380اور بمبارڈئیر کے سی آر جے ایئر کرافٹ جیسے ملٹی ملین ڈالر منصوبوں کی قیادت کرچکی ہیں۔ آپ نارتھ امریکہ اور یورپ میں ونڈ فارم ڈیویلپمنٹ اینڈ مینجمنٹ، انرجی پالیسی اور گیس ٹربائن کمبشن پر بھی خصوصی طور پرکام کرچکی ہیں۔ محترمہ ندا رضوان فرید پاکستان اور دیگر مقامات پر انرجی ایفیشنسی کے بارے میں آگاہی فراہم کرنے کیلئے پرجوش ہیں اور پاکستان کیلئے انٹیگریٹڈ انرجی پلان کی شریک تحریرکار بھی ہیں۔ ان کے منصوبوں میں پاکستان کا پہلا جامع انرجی فلو ڈایاگرام، بجلی کے ذریعہ چلنے والی اپلائنسز کی ایک تقابلی ویب سائٹ savejoules.com، انرجی ایفیشنسی آگاہی مہم، اور ساتھ ساتھ تجارتی اور صنعتی صارفین کیلئے انرجی آڈٹس شامل ہیں۔ آپ میساچوسسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (MIT) سے ایس بی ہیں اور ای ٹی ایچ زیورخ سے ایئر کرافٹ انجنز اور گیس ٹربائنز کی تخصیص کے ساتھ میکنیکل انجینئرنگ میں ایم ایس کیا ہے۔

قاضی عظمت عیسیٰ

ڈائریکٹر

قاضی عظمت عیسیٰ کو ڈیولپمنٹ سیکٹر کا 30سال کا تجربہ حاصل ہے۔ آپ پاکستان پاورٹی ایلیوئیشن فنڈ کے سی ای او کے عہدے پر فائز ہیں جو پاکستان میں کمیونٹی کی بنیاد پر ڈیولپمنٹ کا اعلیٰ ترین ادارہ ہے۔

قاضی عظمت عیسیٰ پاکستان بھر میں غریب اور نادار لوگوں کی زندگیوں کو بہتر بنانے کےلئے پرجوش عزم رکھتے ہیں۔ ان کا یہ عزم ان کے ٹھوس عملی نظرئیے کی بناء پر ہے جو ان کو مختلف النوع اور مختلف شعبوں میں کام کے تجربے اور حکومت (وفاقی اور صوبائی دونوں)، این جی اوز، مخیر حضرات (مختلف روابط اور دوطرفہ تعلقات) اور کمیونٹیز کے ساتھ قریبی رابطوں کے باعث حاصل ہوا۔ جناب قاضی عظمت عیسیٰ اپنے پس منظر کی بناء پر ڈیولپمنٹ کے مختلف مسائل پر گہری نظر رکھتے ہیں اور ڈیولپمنٹ کے طریقہءکار میں تمام شرکاء کے درمیان حقیقی پارٹنر شپ کو مضبوط بنانے اور معاشرے کے محروم اور غیر مراعات یافتہ طبقے کی بہتری کےلئے نمایاں نتائج حاصل کرنے میں مہارت رکھتے ہیں۔

اس سے پہلے جناب قاضی عظمت عیسیٰ ورلڈ بینک کے ساتھ دیہی اور سماجی شعبہ جات میں کام کرچکے ہیں۔ افغانستان میں اپنی تعیناتی کے دوران میں آپ نے ملک میں کمیونٹی کی بنیاد پر سب سے بڑا ڈیولپمنٹ پروگرام تیارکیا اور پوری قوم کےلئے دیہی انٹرپرائز پروگرام کا آغاز کیا۔ اس سے پہلے آپ بلوچستان میں ایک بڑی این جی او کے سربراہ رہ چکے ہیں۔ اس وقت آپ کئی اداروں کے بورڈز میں خدمات انجام دے رہے ہیں جن میں پاکستان مائکرو انویسٹمنٹ کمپنی لمیٹڈ اور بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام شامل ہیں جو پاکستان کے اعلیٰ ترین سیفٹی نیٹ پروگرام ہیں۔

فیصل بنگالی

ڈائریکٹر

جناب فیصل بنگالی ایک پروفیشنل فنڈ منیجر ہیں جو 20سال سے زیادہ کے تجربہ کے حامل ہیں۔ آپ پیوپل مینجمنٹ، ریگولیٹری معاملات، رسک مینجمنٹ اور فنڈمینجمنٹ کی کارکردگی کو بڑھانے میں ثابت شدہ مہارت رکھتے ہیں۔ آپ فنانشل مینجمنٹ کے دیگر پہلوﺅں بشمول بجٹ کی تیاری، سرمایہ کاری، مالیاتی تجزیہ اور ایسیٹ مینجمنٹ میں بھی ماہر ہیں۔ جون 2008سے آپ پی این او کیپیٹل کے ڈائریکٹر انوسٹمنٹ ہیں۔2004 سے 2008 تک آپ اے کے ڈی انویسٹمنٹ لمیٹڈ کے سی ای او رہے جہاں انہوں نے گولڈن ایرو اسٹاک فنڈکے انتظامی امور کی ذمہ داریاں سنبھالیں جو نجی شعبہ میں پاکستان کا قدیم ترین کلوزڈ اینڈڈ میوچل فنڈز ہے۔ 1994 سے 2004تک آپ اے کے ڈی سیکیورٹیز لمیٹڈ کے ڈائریکٹر رہے ۔اپنے کیرئیر کی ابتدا میں آپ بنگال فائبر انڈسٹریز کے نائب صدر تھے۔ جناب فیصل بنگالی نے رائس یونیورسٹی ہیوسٹن ٹیکساس سے ایم بی اے فنانس اور نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی، الیونوائس سے الیکٹریکل انجینئرنگ میں بی ایس سی کیا آپ نے انسٹی ٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاﺅنٹنٹ آف پاکستان سے سرٹیفائڈ ڈائریکٹر ٹریننگ پروگرام کی تربیت بھی حاصل کی ہے۔ جناب فیصل بنگالی کینیڈین سیکوریٹیز انسٹی ٹیوٹ کی جانب سے آفر کئے گئے کینیڈین سیکیورٹیز کورس میں بھی شرکت کرچکے ہیں۔

قاضی محمد سلیم صدیقی

ڈائریکٹر

 قاضی محمد سلیم صدیقی نے مہران یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، جامشورو سے میکینکل انجینئرنگ میں گریجویشن کیا ہے-

نومبر 1990 میں سرکاری ملازمت سے قبل وہ پانچ برس تک شوگر انڈسٹری کا حصہ رہے-  تب سے وزارت پیٹرولیم و قدرتی وسائل میں مختلف اسامیوں پر فرائض کی انجام دہی میں مصروف رہے جس میں سر فہرست انکی حالیہ تعیناتی بطور ڈائریکٹر جنرل (گیس) ہے-  وہ ماری پیٹرولیم کمپنی لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹر بھی رہے-  اس کے ساتھ  ساتھ وہ  پاکستان پیٹرولیم لمیٹڈ اور سوئ نادرن گیس پائپ لائنز لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹر کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دے چکے ہیں-  وہ سارک اور ہائیڈروکاربن ڈویلپمنٹ انسٹیٹیوٹ آف پاکستان کے بورڈ آف گورنرز کے رکن بھی ہیں-

مرزا محمود احمد

ڈائریکٹر

مرزا محمود احمد ایک انتہائی معروف وکیل ہیں اور ایک معتبر لاء فرم منٹو اینڈ مرزا ایڈوکیٹس اینڈ سالیسیٹرز کے پارٹنر ہیں۔ ٢٤ سال پر محیط اپنے پیشہ ورانہ کیریئر میں انہوں نے بطور وکیل کارپوریٹ، کنسٹی ٹیوشنل، ریگولیٹری اور بینکنگ قوانین میں گرا نقد خدمات فراہم کیں۔ سیکوریٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان، آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی، کراچی اسٹاک ایکسچینج سمیت مختلف ریگولیٹری اتھارٹیز کے سامنے کئی کمپنیوں اور اداروں کے مشکل اور کٹھن مقدمات کی پیروی کی۔ ان کے نام سے کئی اشاعت/مشاورتی اور تحقیقی مقالات بھی موجود ہیں جن میں پاکستان میں دیگر قوانین / قواعد و ضوابط کے ساتھ کارپوریٹ گورننس کوڈ کی ہم آہنگی (جو سیکریٹریز ایکسچینج کمیشن آف پاکستان کے لئے ایک تحقیقی معاملہ تھا جس کے لئے یو این ڈی پی نے مالی معاونت فراہم کی تھی) شامل ہیں۔ آپ ایس این جی پی ایل کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں بحیثیت چیرمین ایچ آر کمیٹی بھی خدمات انجام دیتے ہیں اس کے ساتھ ساتھ آپ پاکستان انجینئرنگ کمپنی کی آڈٹ کمیٹی کے چیئرمین بھی بنے۔ ایم سی بی، عارف حبیب انویسٹمنٹ لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹر کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دیں۔ اس کے علاوہ آپ لاہور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے رکن ہونے کے ساتھ ساتھ پنجاب بار کونسل کے فعال رکن بھی ہیں۔ آپ نے یونیورسٹی آف کیمبرج سے ایل ایل ایم کی ڈگری حاصل کی۔ وہ ١٩٩٦ سے قائدِاعظم لاء کالج کے لیکچرار کی حیثیت سے خدمات انجام دیتے رہے ہیں اور لمس کے ایگزیکٹو ڈویلپمنٹ سینٹر اور ساتھ ہی انسٹیٹیوٹ آف چارٹرڈ اکائونٹنٹس آف پاکستان (ICAP) کی جانب سے منعقدہ ڈائریکٹر ٹریننگ سیشن میں باقاعدگی سے لیکچر بھی دیتے ہیں۔

اڈاکٹر احمد مجتبیٰ میمن

ڈائریکٹر

ڈاکٹر احمد مجتبیٰ میمن کو حکومت ِ پاکستان کی جانب سے 5اپریل2018 کو ایس ایس جی سی ایل کا ڈائریکٹر مقرر کیا۔ اس سے پہلے آپ کی پوسٹنگ فنانس ڈویژن میں تھی۔ آپ نے Input Output Co-efficient Organization، ایف بی آر ، کراچی میں بطور ڈائریکٹر جنرل خدمات انجام دیں۔ آپ نے نومبر1987میں پاکستان کسٹمز اینڈ ایکسائز گروپ (موجودہ پاکستان کسٹمز سروس) میں شمولیت اختیار کی اور سینٹرل ایکسائز، سیلز ٹیکس، ویلوایشن، ایڈجو کیشن اور کسٹمز کے فعال شعبہ جات میں مختلف عہدوں پر کام کیا۔اس کے علاوہ ایشین ڈیولپمنٹ بینک کے ٹریڈ ایکسپورٹ پروموشن اینڈ انڈسٹریلائزیشن(TEPI) لون پروجیکٹ اور ایف بی آر میںTEPIکے سیکرٹری کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔آپ کا ایک وسیع پیشہ ورانہ اور اکیڈمک پس منظر کے حامل ہیں۔آپ کی تعلیمی قابلیت میں ایم بی بی ایس، ایم اے (اکنامکس) اور ایم بی اے فنانس شامل ہیں۔ آ پ مارچ 2018سے تا حال فنانس ڈویژن میں ایڈیشنل فنانس سیکرٹری (CF/HR)کے عہدے پر کام کررہے ہیں۔آپ نیس پاک اور کے الیکٹرک کے بورڈآف ڈائریکٹرز کے ممبر بھی ہیں۔

جناب شیرافگن خان

ڈائریکٹر

جناب شیرافگن خان نے ایچیسن کالج لاہور سے سینئر کیمبرج کی تعلیم مکمل کی۔ اس کے بعد لاہور امریکن اسکول سے ہائی اسکول ڈپلومہ مکمل کرنے کے بعد وہ یونیورسٹی آف سانتا کلارا، کیلی فورنیا، یو ایس اے سے بی ایس سی کے ساتھ گریجویشن کیا۔ 1989 میں انہوں نے پاکستان سول سروسز میں PAS/DMG گروپ میں شمولیت اختیار کی۔ ٹریننگ مکمل کرنے کے بعد اُنہوں نے مختلف اضلاع میں بطور اسسٹنٹ کمشنر، ایگزیکٹیو ڈسٹرکٹ آفیسر اور ڈسٹرکٹ کوآرڈینیشن آفیسر کام کیا اور سکریٹریٹ میں ہاﺅسنگ، زراعت اور ماحولیات کے محکموں میں ڈپٹی سیکریٹری اور ایڈیشنل سیکریٹری کی حیثیت سے کام کیا۔ انہوں نے سول سروسز اکیڈمی (ڈی ایم جی کیمپس) اور نیشنل اسکول آف پبلک پالیسی میں بطور فیکلٹی/ انسٹرکٹر بھی خدمات انجام دیں۔ اپریل 2018 میں پیٹرولیم ڈویژن میں شمولیت اختیار کرنے سے قبل، اُنہوں نے بطور ایڈیشنل سیکریٹری وزارت داخلہ میں بھی کام کیا۔ اس وقت آپ بطور ایڈیشنل سیکریٹری وزارت توانائی پیٹرولیم ڈویژن، پاکستان ایل این جی ٹرمینل لمیٹڈ (PLTL) ، پاک عرب ریفائنری لمیٹڈ (PARCO) اور سوئی ناردرن گیس پائپ لائن لمیٹڈ کے بورڈ کے رُکن ہیں۔

منظور علی شیخ

ڈائریکٹر
جناب منظور علی شیخ، BPS-20میں پاکستان ایڈمنسٹریٹیو سروس، وفاقی حکومت کے افسر ہیں، جو اس وقت اسٹیٹ لائف انشورنس کارپوریشن آف پاکستان میں ایگزیکٹیو ڈائریکٹر کے عہدے پر فائز ہیں۔ SLICمیں تعیناتی سے پہلے آپ وفاقی اور سندھ کی صوبائی حکومت میں مختلف حیثیتوں میں خدمات انجام دے چکے ہیں۔ ان کی گزشتہ تعیناتی حکومتِ سندھ میں لیبر اینڈ ہیومن ریسورسز ڈپارٹمنٹ میں بطور سیکریٹری تھی۔ آپ فاریسٹس اینڈ وائلڈ لائف ڈپارٹمنٹ میں بطورسیکرٹری فرائض انجام دے چکے ہیں۔ آپ نے ڈائریکٹر، ٹریڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان، ایگزیکٹیو ڈائریکٹر، ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان اور ڈویژنل کمشنرسکھر ڈیویژن کے طور پر بھی خدمات انجام دی ہیں۔
جناب منظور علی شیخ نے 1994میں سول سروس میں شمولیت اختیار کی اور مختلف شعبہ جات، جیسے پبلک سیکٹر مینجمنٹ، ایڈمنسٹریشن، ٹریڈ اینڈ کامرس، پلاننگ اینڈ ڈیولپمنٹ، پاورٹی ایلیویشن اور کرائسس مینجمنٹ میں سینئر مینجمنٹ کے عہدوں پر کام کرنے کا وسیع پیشہ ورانہ تجربہ حاصل ہے۔ آپ نے کئی پروفیشنل ٹریننگ کورسز اور ورکشاپس میں شرکت کی جس میں پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف کارپوریٹ گورننس (PICG) کی جانب سے منعقدہ گورننس آف رسک اینڈ ہیومن ریسورس اینڈریمونریشن کمیٹی شامل ہے۔ جناب منظور علی شیخ سول انجینئرنگ میں پروفیشنل ڈگری اورر اکنامکس میں بیچلرز ڈگری کے حامل ہیں۔

سید اختر علی

ڈائریکٹر

سابق ممبر انرجی پلاننگ کمیشن MPDR، اسلام آباد سیداخترعلی ایک معروف انرجی ایکسپرٹ اورکنسلٹنٹ ہیں جنہوں نےپبلک اورپرائیویٹ سیکٹرکےکلائنٹس کوانرجی پالیسی،انوسٹمنٹ اورٹیرف کےمسائل کےبارےمیں مشاورت کی خدمات انجام دی ہیں۔ آپ نےاس مضمون پرکئی کتابں بھی تحریرکی ہیں۔آپ حال ہی میں انرجی پالیسی اورانوسٹمنٹ کی مشاورت کےسلسلےمیں انرجی پلاننگ کمیشن کےممبربھی رہےہیں۔ آپ IoBMکےساتھ انرجی کےوزٹنگ پروفیسرکی حیثیت سےایم بی اے کے طلبہ کوانرجی منیجمنٹ کےبارے میں پڑھا چکے ہیں۔ آپ پاکستان کےپبلک اورپرائیویٹ سیکٹرمیں ٹاپ مینجمنٹ کے عہدوں پرفائزرہےہیں۔ آپ ہارورڈ یونیورسٹی میں ریسرچ فیلوانرجی تھے۔ آپ انرجی، گورننس، پولیٹیکل اکنامی اورریسورسز کے بارے میں آٹھ کتابوں کےمصنف ہیں۔ ملک میں خدمات انجام دینے کےعلاوہ آپ یورپ، مڈل ایسٹ، افریقہ اور ساﺅتھ ایشیاء کے ممالک میں انرجی، پالیسی، ٹیرف، سسٹین ایبلٹی، انوائرنمنٹ، کنزرویشن، انرجی ایفیشنسی اور رینیوایبل انرجی کےشعبہ جات میں نگرانی اورمشاورت کی خدمات انجام دے چکے ہیں۔ آپ نے مقامی طور پر خصوصاً انرجی کےشعبہ میں آلات کی تیاری میں بھی کافی وقت اور توانائی صرف کی ہے۔ آپ وفاقی اورصوبائی حکومتوں بشمول چیمبر آف کامرس کےایکسپرٹ ورکنگ گروپ اورمختلف کمیٹیز کے ممبربھی رہے ہیں۔


اپڈیٹڈ: جون 20، 2019